وفاق کے تعلیمی نصاب کو ہم نہیں مانتے”- سندھ حکومت نے ملک میں یکساں تعلیمی نصاب نافذ کرنے کی مخالفت کر دی

video: The Sindh government opposed the introduction of a uniform curriculum in the country.

تفصیلات کے مطابق وفاقی کے اس تعلیمی نظام کو ہم نہیں مانتے وزیر اعلیٰ سندھ نے اعلان کر دی،ا یکساں تعلیمی نصاب کی مخالفت کر دی۔ سندھی حکومت کا کہنا ہے کہ ہمارا نصاب وفاقی حکومت کی نسبت جدید ہے، ہم وفاق کے تعلیمی نصاب کو نہیں مانتے۔اٹھارہویں ترمیم کے تحت تعلیمی نصاب ہمارا اختیار ہے۔

وفاق ہمارے معاملات میں مداخلت نہ کرے، گزشتہ روز وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کی زیرِ صدارت اجلاس ہوا اور اس اجلاس میں وزیرِ تعلیم سندھ سعید غنی نے اس حوالے سے مکمل بریفنگ دی۔

انہوں نے بتایا کہ وفاق کی جانب سے ایک نصاب بھیجا گیا ہے جو وفاق پورے ملک میں نافذ کرنا چاہتا ہےاجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ صوبائی حکومت اپنا تعلیمی نصاب برقرار رکھےگی تاہم وفاق کےنصاب میں اچھی چیزکوصوبائی نصاب میں شامل کیاجائے گا۔

اجلاس میں طے ہوا کہ صوبائی تعلیم نصاب ختم کر کے وفاق ک انصاب نہیں اپنا سکتے۔اس موقع پر وزیر اعلیٰ سندھ نے کہا کہ یہ اختیار صوبائی حکومت کا وفاق اس میں مداخلت نہ کرے۔یاد رہے کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت نے مارچ 2020 تک ملک میں یکساں نصاب نافذ کرنے کا اعلان کیا تھا۔

وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے کہا تھا کہ وزیر اعظم عمران خان ملک بھر میں یکساں نصابِ تعلیم کے حامی ہیں، اب اس اہم ترین مسئلے کے حل اور اسے عملی جامہ پہنانے کا وقت آگیا ہے۔واضح رہے کہ عمران خان اپوزیشن میں رہ کر یہ وعدہ کرچکے ہیں کہ ہماری حکومت ملک میں ایک تعلیمی نظام لیکر آئے گی، جبکہ وزیراعظم بننے کے بعد بھی وہ کئی بار اعلان کرچکے ہیں کہ ملک میں ایک تعلیمی نظام ہونا چاہیئے۔ اس حوالے سے وزیراعظم یہ بھی کہہ چکے ہیں اگر ہمیں ایک قوم بننا ہے تو ایک ہی نصاب لانا ہوگا، اس کے بغیر ہمارا ایک قوم بننا بہت مشکل ہے۔

Leave a Reply